نیوزی لینڈ ٹیم کو انڈیا سے جعلی ای میل آئی ڈیز بنا کر دھمکیاں دی گئیں، وزیر اطلاعات

  Click to listen highlighted text! اسلام آباد : پاکستان نے کہا ہے کہ نیوزی لینڈ کی ٹیم کو انڈیا سے جعلی ای میل آئی ڈیز بنا کر دھمکیاں دی گئیں کہ ان پر دورہ پاکستان کے دوران حملہ کیا جا سکتا ہے، اسلام آباد میں وزیر داخلہ شیخ رشید کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے وزیر اطلاعات فواد چودھری نے کہا کہ اس کیس میں مقدمہ درج کر کے اب انٹرپول سے رابطہ کیا گیا ہے، کرکٹ کے خلاف سازش ہے اور کھیلوں کی عالمی باڈیز کو اس کا نوٹس لینا چاہیے، پاکستان کے لوگوں میں غم و غصہ پایا جاتا ہے اور لوگ اس دورے کی منسوخی پر ناراض ہیں، وزیر اطلاعات نے کہا کہ اگست کی 19 تاریخ کو پہلی بار فیک فیس بک پوسٹ احسان اللہ احسان کے نام سے شیئر کی جاتی ہے جس میں یہ کہا جاتا ہے کہ نیوزی لینڈ کرکٹ بورڈ پاکستان کا دورہ منسوخ کرے کہ یہاں مقامی جہادی تنظیم داعش بڑے ہدف کی تلاش میں ہے، اور یہ نیوزی لینڈ کی ٹیم بھی ہو سکتی ہے، وزیر اطلاعات کے مطابق اس کے بعد دلچسپ واقعہ ہوا کہ 21 اگست کو اسی فیک فیس بک پوسٹ کی بنیاد پر انڈیا میں سنڈے گارڈین نامی ہندی اخبار کے بیورو چیف ابھینندن مشرا نے ایک آرٹیکل چھاپا، ابھینندن مشرا کے پاکستان مخالف سابق نائب افغان صدر امراللہ صالح سے بہت مضبوط رابطے ہیں، اس کے بعد انڈیا سے دو ای میل آئی ڈیز بنا کر نیوزی لینڈ کی ٹیم کو دھمکیاں دی گئیں، وزیر اطلاعات نے بتایا کہ 24 اگست کو نیوزی لینڈ کے کرکٹر مارٹن گپٹل کی اہلیہ کو ایک ای میل ملی اور ان کو یہ دھمکی دی گئی کہ ان کے شوہر کو پاکستان میں قتل کر دیا جائے گا، ہم نے اس کی تفتیش کی تو معلوم ہوا کہ یہ ای میل اکاؤنٹ رات کو بنایا گیا تھا اور اگلی صبح اس سے دھمکی آمیز پیغام بھیجا گیا یہ پروٹون میل سے بھیجی گئی جو ایک محفوظ سروس ہے اس کے لیے انٹرپول کو لکھا ہے، ان تمام واقعات کے باوجود نیوزی لینڈ کی ٹیم نے اپنا ٹور منسوخ نہیں کرتی بلکہ یہاں آ جاتی ہے، ٹیم کے لیے مکمل سیکیورٹی پروٹوکول تشکیل دیا گیا تھا۔

اسلام آباد : پاکستان نے کہا ہے کہ نیوزی لینڈ کی ٹیم کو انڈیا سے جعلی ای میل آئی ڈیز بنا کر دھمکیاں دی گئیں کہ ان پر دورہ پاکستان کے دوران حملہ کیا جا سکتا ہے، اسلام آباد میں وزیر داخلہ شیخ رشید کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے وزیر اطلاعات فواد چودھری نے کہا کہ اس کیس میں مقدمہ درج کر کے اب انٹرپول سے رابطہ کیا گیا ہے، کرکٹ کے خلاف سازش ہے اور کھیلوں کی عالمی باڈیز کو اس کا نوٹس لینا چاہیے، پاکستان کے لوگوں میں غم و غصہ پایا جاتا ہے اور لوگ اس دورے کی منسوخی پر ناراض ہیں، وزیر اطلاعات نے کہا کہ اگست کی 19 تاریخ کو پہلی بار فیک فیس بک پوسٹ احسان اللہ احسان کے نام سے شیئر کی جاتی ہے جس میں یہ کہا جاتا ہے کہ نیوزی لینڈ کرکٹ بورڈ پاکستان کا دورہ منسوخ کرے کہ یہاں مقامی جہادی تنظیم داعش بڑے ہدف کی تلاش میں ہے، اور یہ نیوزی لینڈ کی ٹیم بھی ہو سکتی ہے، وزیر اطلاعات کے مطابق اس کے بعد دلچسپ واقعہ ہوا کہ 21 اگست کو اسی فیک فیس بک پوسٹ کی بنیاد پر انڈیا میں سنڈے گارڈین نامی ہندی اخبار کے بیورو چیف ابھینندن مشرا نے ایک آرٹیکل چھاپا، ابھینندن مشرا کے پاکستان مخالف سابق نائب افغان صدر امراللہ صالح سے بہت مضبوط رابطے ہیں، اس کے بعد انڈیا سے دو ای میل آئی ڈیز بنا کر نیوزی لینڈ کی ٹیم کو دھمکیاں دی گئیں، وزیر اطلاعات نے بتایا کہ 24 اگست کو نیوزی لینڈ کے کرکٹر مارٹن گپٹل کی اہلیہ کو ایک ای میل ملی اور ان کو یہ دھمکی دی گئی کہ ان کے شوہر کو پاکستان میں قتل کر دیا جائے گا، ہم نے اس کی تفتیش کی تو معلوم ہوا کہ یہ ای میل اکاؤنٹ رات کو بنایا گیا تھا اور اگلی صبح اس سے دھمکی آمیز پیغام بھیجا گیا یہ پروٹون میل سے بھیجی گئی جو ایک محفوظ سروس ہے اس کے لیے انٹرپول کو لکھا ہے، ان تمام واقعات کے باوجود نیوزی لینڈ کی ٹیم نے اپنا ٹور منسوخ نہیں کرتی بلکہ یہاں آ جاتی ہے، ٹیم کے لیے مکمل سیکیورٹی پروٹوکول تشکیل دیا گیا تھا۔