لاہور : دعا زہرا کی بازیابی کیلئے سول سوسائٹی کا لبرٹی چوک پر مظاہرہ

  Click to listen highlighted text! لاہور : دعا زہرا کی بازیابی کیلئے سول سوسائٹی نے لاہور کے لبرٹی چوک پر مظاہرہ کیا۔ مظاہرے میں مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے ڈپٹی چیئرمین علامہ احمد اقبال رضوی اور دیگر رہنماؤں اور شہریوں نے شرکت کی۔ مظاہرین نے سندھ ہائیکورٹ کے جج کے فیصلے پر عدم اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے اسے جانبدارانہ قرار دیا۔ رہنماؤں کا کہنا تھا کہ دعا زہرا کو اغواء کیا گیا ہے اور وہ خوف کے باعث اپنے والدین سے ملنے سے انکاری تھی۔ علامہ احمد اقبال رضوی نے کہا کہ کوئی قانون کمسن بچی کی زبردستی شادی کی اجازت نہیں دیتا، اور نہ کوئی قانون بچی کو والدین سے ملاقات کرنے سے روک سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دعا زہرا کو دباؤ میں رکھا گیا، ملزموں کی طرح عدالت میں پیش کیا گیا اور والدین سے بھی ملنے کی اجازت نہیں دی گئی، دعا زہرا کے چہرے سے خوف عیاں تھا، عدالت نے بھی قانون کے مطابق فیصلہ نہیں دیا۔ عدالتی فیصلے میں شریعت اور قانون دونوں کو نظرانداز کیا گیا۔ مظاہرین نے مطالبہ کیا کہ دعا زہرا مافیا کے چنگل میں ہے، اس کو بازیاب کروا کر والدین کے حوالے کیا جائے۔

لاہور : دعا زہرا کی بازیابی کیلئے سول سوسائٹی نے لاہور کے لبرٹی چوک پر مظاہرہ کیا۔ مظاہرے میں مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے ڈپٹی چیئرمین علامہ احمد اقبال رضوی اور دیگر رہنماؤں اور شہریوں نے شرکت کی۔ مظاہرین نے سندھ ہائیکورٹ کے جج کے فیصلے پر عدم اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے اسے جانبدارانہ قرار دیا۔ رہنماؤں کا کہنا تھا کہ دعا زہرا کو اغواء کیا گیا ہے اور وہ خوف کے باعث اپنے والدین سے ملنے سے انکاری تھی۔ علامہ احمد اقبال رضوی نے کہا کہ کوئی قانون کمسن بچی کی زبردستی شادی کی اجازت نہیں دیتا، اور نہ کوئی قانون بچی کو والدین سے ملاقات کرنے سے روک سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دعا زہرا کو دباؤ میں رکھا گیا، ملزموں کی طرح عدالت میں پیش کیا گیا اور والدین سے بھی ملنے کی اجازت نہیں دی گئی، دعا زہرا کے چہرے سے خوف عیاں تھا، عدالت نے بھی قانون کے مطابق فیصلہ نہیں دیا۔ عدالتی فیصلے میں شریعت اور قانون دونوں کو نظرانداز کیا گیا۔ مظاہرین نے مطالبہ کیا کہ دعا زہرا مافیا کے چنگل میں ہے، اس کو بازیاب کروا کر والدین کے حوالے کیا جائے۔