عزاداروں پر مقدمات، وزیر انسانی حقوق نے معاملہ قومی اسمبلی میں اٹھادیا

اسلام آباد : وزیر انسانی حقوق ریاض حسین پیرزادہ نے گذشتہ سال محرم میں عزاداروں پر ایف آئی آر درج کرنے کا معاملہ قومی اسمبلی میں اٹھادیا۔ انہوں نے ایوان کو بتایا کہ کسی بھی مذہبی جماعت یا فرقہ کی مذہبی رسومات کی ادائیگی میں رکاوٹ نہ ڈالنے کیلئے وزیر داخلہ اور تمام صوبوں کے آئی جیز، چیف سیکرٹریز کو خط لکھ دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آئین کا آرٹیکل 20 شہریوں کو مذہبی آزادی کا حق دیتا ہے۔ اس حق کا تحفظ تمام ریاستی اداروں کی ذمہ داری ہے۔ اگر دوبارہ ایسے واقعات ہوئے تو بطور وزیر انسانی حقوق میں سخت اقدامات پر مجبور ہوں گا۔ یہ کس کو اختیار ہے کہ اگر کہیں مجلس یا جلوس مقررہ وقت سے آدھا گھنٹہ دیر تک جاری رہے تو اس کیخلاف دہشت گردی کا پرچہ کاٹ دیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ محرم الحرام ميں عزاداروں پر نام نہاد سیکیورٹی اقدامات کا بہانہ بنا کر بلاجواز پرچے کاٹنا اور مقدمات بنانا ہر لحاظ سے قابل مذمت اور آئین کی خلاف ورزی ہے۔ آئین کا آرٹیکل 20 اسکے شہریوں کو مذہبی آزادی کا حق دیتا ہے۔ اس حق کا تحفظ تمام ریاستی اداروں کی ذمہ داری ہے۔ عزاداری کی مجالس کے شرکاء پر فورتھ شیڈول کا غلط استعمال کر کے پرچے نہ دیے جائیں۔ خاص کر کے صوبہ پنجاب میں جہاں ایسے بہت سے واقعات پیش آچکے ہیں جہاں سیکیورٹی کے نام پر مذہبی آزادی کو پامال کیا جاتا رہا ہے۔

  Click to listen highlighted text! اسلام آباد : وزیر انسانی حقوق ریاض حسین پیرزادہ نے گذشتہ سال محرم میں عزاداروں پر ایف آئی آر درج کرنے کا معاملہ قومی اسمبلی میں اٹھادیا۔ انہوں نے ایوان کو بتایا کہ کسی بھی مذہبی جماعت یا فرقہ کی مذہبی رسومات کی ادائیگی میں رکاوٹ نہ ڈالنے کیلئے وزیر داخلہ اور تمام صوبوں کے آئی جیز، چیف سیکرٹریز کو خط لکھ دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آئین کا آرٹیکل 20 شہریوں کو مذہبی آزادی کا حق دیتا ہے۔ اس حق کا تحفظ تمام ریاستی اداروں کی ذمہ داری ہے۔ اگر دوبارہ ایسے واقعات ہوئے تو بطور وزیر انسانی حقوق میں سخت اقدامات پر مجبور ہوں گا۔ یہ کس کو اختیار ہے کہ اگر کہیں مجلس یا جلوس مقررہ وقت سے آدھا گھنٹہ دیر تک جاری رہے تو اس کیخلاف دہشت گردی کا پرچہ کاٹ دیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ محرم الحرام ميں عزاداروں پر نام نہاد سیکیورٹی اقدامات کا بہانہ بنا کر بلاجواز پرچے کاٹنا اور مقدمات بنانا ہر لحاظ سے قابل مذمت اور آئین کی خلاف ورزی ہے۔ آئین کا آرٹیکل 20 اسکے شہریوں کو مذہبی آزادی کا حق دیتا ہے۔ اس حق کا تحفظ تمام ریاستی اداروں کی ذمہ داری ہے۔ عزاداری کی مجالس کے شرکاء پر فورتھ شیڈول کا غلط استعمال کر کے پرچے نہ دیے جائیں۔ خاص کر کے صوبہ پنجاب میں جہاں ایسے بہت سے واقعات پیش آچکے ہیں جہاں سیکیورٹی کے نام پر مذہبی آزادی کو پامال کیا جاتا رہا ہے۔